by Aftab Khalid
Posted in
اَشعار

Tagged , ,
Leave a Comment

اپنی تنہائی کا ایوان سجا لیتے ہیں

رات دن ہم تیری یادوں کا سہارا لے کر 
اپنی تنہائی کا ایوان سجا لیتے ہیں

by Aftab Khalid
Posted in
اَشعار

Tagged , ,
Leave a Comment

جو بجھ گئے تو ہوا سے شکا یتیں کیسی

ہوا کے دوش پہ رکھے ہو ئے چراغ ہیں ہم
جو بجھ گئے تو ہوا سے شکا یتیں کیسی

by Aftab Khalid
Posted in
غزلیں

Tagged , ,
Leave a Comment

صبح نہیں ہو گی کبھی ، دل میں بٹھالےتو بھی

صبح نہیں ہو گی کبھی ، دل میں بٹھالےتو بھی
خود کو برباد نہ کر جاگنے والے تو بھی

میں کہاں تک تیری یادوں کےتعاقب میں رہوں
میں جو گم ہوں تو کبھی مرا پتہ لے تو بھی

اک شبستانِ رفاقت ہو ضروری تو نہیں
دشت تنہائی میں آ جشن منالے تو بھی

لفظ خود اپنے معانی کو طلب کرتا ہے
دل کی دیوار پہ اک نقش بنالے تو بھی

ٹوٹ جائیں نہ رگیں ضبط مسلسل سےکہیں
چھپ کےتنہائی میں کچھ اشک بہالے تو بھی

عہد حاضر میں تو پندار کی قیمت ہی نہیں
کوئی تیشہ نہ اٹھا ، کاسہ اٹھا لے تو بھی

میں نے اک عمر کے خوابوں کو تیرے نام کیا
اپنے احساس کو کر میرے حوالے تو بھی

میں بھی دل میں تری تصویر چھپائے رکھوں
اپنے ہونٹوں سے مرا نام مٹالے تو بھی

by Aftab Khalid
Posted in
اَشعار

Tagged , ,
Leave a Comment

وہ اک شکستہ کنارہ ہے اور کچھ بھی نہیں

رواں دواں ہیں سفینے تلاش میں جس کی
وہ اک شکستہ کنارہ ہے اور کچھ بھی نہیں

by Aftab Khalid
Posted in
اَشعار

Tagged , ,
Leave a Comment

خراب آہستہ آستہ

شکیل اس درجہ مایوسی شروع عشق میں کیسی  
ابھی تو اور ہونا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خراب آہستہ آستہ 

by Aftab Khalid
Posted in
اَشعار

Tagged , ,
Leave a Comment

بہاریں لے کے آئے تھے جہاں تم

بہاریں لے کے آئے تھے جہاں تم
 وہ گھر سنسان جنگل ہو گئے ہیں
by Aftab Khalid
Posted in
اَشعار

Tagged , ,
Leave a Comment

نمک چھڑک تو چھڑک زخم پر دوا نہ لگا

حیات لذت آزار کا ہے دوسرا نام 
نمک چھڑک تو چھڑک ، زخم پر دوا نہ لگا

by Aftab Khalid
Posted in
اَشعار

Tagged , ,
Leave a Comment

احساس میں شدید طلالم کے باوجود

احساس میں شدید طلالم کے باوجود 
چپ ہوں مجھے سکون میسر ہو جس طرح

by Aftab Khalid
Posted in
نظمیں

Tagged , ,
Leave a Comment

غزالِ جاں

محبت آب و دانے کی طرح سے ہے
غزالِ جاں

محبت آب و دانے کی طرح سے ہے 
اُنھیں شہروں، محلّوں اور گلیوں اور گھروں تک 
اور گھروں کے آنگنوں تک کھینچ لاتی ہے
جہاں وہ پلتی بڑھتی ہے
رگِ گُل کی طرح شاخِ تمنّا پر مہکتی ہے
ہَوا کے ساتھ خوشبو کی طرح بن بن کے چلتی ہے
لبِ دریا
سرِ صحرا
کسی صحنِ گلستاں میں
کسی خوابِ گریزاں میں
کسی رستے کی جھلمل میں 
کسی دُوری کی منزل میں
کسی صبحِ گُل تر میں
کسی شام سُبک سَر میں
کسی دن شب کے سائے میں
کسی شب دن کے پہرے میں کھڑی ویراں سرائے میں 
محبت اِک شکاری کی طرح دل کو کہیں بھی گھیرسکتی ہے 
محبت آب و دانے کی طرح سے ہے
مقدر میں اگر یہ ہو
تو بارش کی طرح ہر ہر مسامِ جاں
کے اندر تک برستی ہے
جمالِ وصل کی صورت
گلِ صدر نگ کی ہم راز سطحوں پر مہکتی ہے
رگوں میں دوڑتے پھرتے لہو کے
ایک اک قطرے کے اندردرد کی صورت پگھلتی ہے
لباسِ ہجر کے اندر بدن بن کر سلگتی ہے
غزالِ دشتِجاں۔ ۔ ۔ اے دِل!
نظر کشکول ہے
کشکول کو ہاتھوں میں رکھ، پیروں میں
مٹّی کے بنے جوتے پہن، گردن میں
مالائیں، لبوں پر بانسری کے گن سجا
اس دشت سے باہر نکل اے دل!
محبت آب و دانے کی طرح سے ہے
محبت آب و دانے کی طرح سے ہے
کسی کو کیا خبر اے عشق مسلک
اے غزالِ دشتِ جاں، اے دل
کہاں سے چل کے کس چوکھٹ پہ کس کے
ہاتھ سے ،کب درد کی خیرات مل جائے
محبت آب و دانے کی طرح سے ہے

by Aftab Khalid
Posted in
اَشعار

Tagged , ,
Leave a Comment

زرا بھی پاؤں میں لرزش نہیں ھے

زرا بھی پاؤں میں لرزش نہیں ھے
ھمیں کانٹوں پہ چلنا آ گیا نا ؟